Home » Updates » سنت اعتکاف

سنت اعتکاف

رمضان کے آخری عشر ے میں اعتکاف سنت موکدہ ہے اعتکاف عکف سے بنا ہے جس کے معنی ٹھرنا یا قائم رہنا ہے  شریعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم میں بہ نیت عبادت مسجد میں ٹھہرنے کا نام اعتکاف ہے ‘ اعتکاف تین قسم کا ہے  (1  )    اعتکاف فرض جیسے نذر مانا ہوا اعتکاف (2)اعتکاف سنت یہ بیسوں رمضان کی عصر سے عید کاچاند دیکھنے تک ہے (3)اعتکاف نفل اس کی مدت جب بھی مسجد میں داخل ہوں تو کہہ دے کہ میں نے اعتکاف کی نیت کی

رمضان کااعتکاف سنت موکدہ علی الکفایہ ہے یعنی اگر بستی میں کسی ایک نے کر لیا تو سب کی طرف سے ادا ہو گیا اور اگر کسی نے ناکیا تو سب سنت کے تارک ہوۓ مرد جماعت والی مسجد میں اعتکاف کر سکتا ہے جبکہ عورت گھر میں کوئی جگہ مخصوص کرکے اعتکاف کرسکتی ہے

سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم رمضان کےآخری عشرہ کااعتکاف کرتےتھے حتیٰ اللہ تبارک وتعالٰی نے اپ صلی اللہ علیہ وسلم کو وفات دی پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے آپ کی ازواج نے اعتکاف کیا ‘

  • ·        (بخاری مسلم)

حدیث نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے معلوم ہوا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہر سال اعتکاف فرما تے اسی لیے اسے سنت موکدہ کہا گیا ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد ازواج مطہرات نے اس پر ہمیشگی فرمائ

سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ فرماتی ہیں معتکف کیلے سنت یہ ہے کہ نا تو وہ بیمار کی مزاج پرسی کرے ‘ اور نہ جنازہ کو جاۓ ‘ نہ عورت کو ہاتھ لگاۓ نا مباشرت کرے ‘ اور نا کسی کام کو جاۓ سواۓ ضروری کام کے ‘ بغیر روزہ اعتکاف نہیں ‘ اورصرف جامع مسجد میں ہی اعتکاف کرے’                                                                                                                     

                                            (ابوداؤد)                                                                     

اس حدیث طیبہ میں اعتکاف کے تمام مسائل ذکر کیے گئے  ہیں کہ جوشخص اعتکاف کی نیت سے مسجد کا رخ کرے پھر اس کو بعض احتیاط لازمی ہیں کہ وہ دنیا سے بے رغبتی برتے اور اپنی تمام تر توجہ اللہ تبارک وتعالی کی طرف مرکوز کرے اور خالصتا اللہ کیلیےہوجاے  کہ وہ نا تو کسی کی بیمار پرسی کرے اورنا جنازہ کو جاے نا اپنی عورت کو شہوت کے ساتھ چھوے یعنی بوسو کنار ناکرے اور نا ہی ہمبستری کرے نا کسی کام کو جاے سواے ضروری کام کے یعنی بلاضرورۃ مسجد سے باہر نا نکلے مگر غسل جنابت اور بول براز کیلیے مزید یہ کہ اعتکاف کیلیے روزہ شرط ہےرمضان کا اعتکاف بغیر روزہ نہیں ہوتا  اور مردوں کیلیے ایسی   مسجد میں اعتکاف ضروری ہے جہاں باجماعت نماز ادا ہوتی ہو’

اب ہم مقصد اعتکاف کی طرف آتے ہیں کہ اعتکاف کیا کس لیے جاتاہے تو اس کا مختصرا جواب یہ ہے کہ اعتکاف شب قدر کو تلاش کرنے کیلیے ہے جیسا احادیث مبارکہ سے واضح ہے

سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ شب قدر رمضان کے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں ڈھونڈو

(بخاری)

حدیث رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے معلوم ہوا کہ شب قدر رمضان المبارک کی آخری عشرے کی طاق راتوں میں موجود ہے اسی مقصد کیلیے اعتکاف کیا جاتا ہے کہ شب قدر کو تلاش کیا جائے اب یہاں یہ ذکر کرنا ضروری ہے کہ شب قدر ہے کیا اور کیوں اس کی تلاش کی جائے چنانچہ اللہ تبارک وتعالیٰ قرآن کریم   میں ارشاد فرما تا ہے   لیلۃالقدر خیرمن الف شھر

   (سورہ القدر آیت 3)                                                                                                                                                                     

شب قدر ہزار راتوں سے بہتر ہے اس ایک رات میں ہزار راتوں کی عبادت کا ثواب رکھ دیاگیاہے اسی لیئے اسے تلاش کرنےکا حکم دیا گیا ہے کہ ایک ہی رات میں بھلائیں رکھ دی گئیں ہیں تو جب انسان ہر چیز کو پس پشت ڈال کر اسے تلاش کرے گا تو یقینا اسے پا لےگا اور یہ آخری عشرہ کی طاق راتوں یعنی اکیس ‘ تیئس ‘پچیس ‘ ستائیس اور انتیسوں شب میں سے کوئی ایک ہے اللہ ہم سب کو اس رات کیلیئے کوشش کرنے کی توفیق عطا فرمائے اور یہ مبارک رات ہمارے  نصیب میں فرمائے    (آمین بجاہ النبی الامین)

                                            (والسلام)                                                                                                              

Spread the love

Related Posts